ظلم مٹتا نہیں معافی سے

ظلم مٹتا نہیں معافی سے
چین آتا ہے بس تلافی سے
جب سے لازم ہوا ہے وہ مجھ پر
لوگ لگنے لگے اضافی سے
اس کو بھاتی ہیں جھیل سی آنکھیں
میرے دو نین ہیں غلافی سے
یوں تو کرتا ہے جاں فِدا مجھ پر
کام لیتا ہے ___انحرافی سے
کیسے کہہ دوں خفا نہیں ہو تم
سن کے الفاظ اختلافی سے
میرے زخموں پہ رکھ دیا مرہم
وہ جو لایا تھا ربِّ شافی سے
اس پہ چنداں اثر نہیں ہوتا
سر ہلاؤں بھی گر منافی سے
منزّہ سیّد

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے