Zaroon Ko Kia Hamsar-e-Khursheed

ذروں کو کیا ہمسرِ خورشیدِ جہاں تاب
ہر سنگِ سرِ رہ کو کیا گوہرِ نایاب
چمکے ہیں ترے نور سے کیا کیا خس وخاشاک
اے صاحبِ لولاک ﷺ

ہے فخر تجھے فقر پہ اے شاہِ دوعالم
اے ختمِ رسل ، ہادی دیں ، خلقِ مجسم
سرمہ ہے مری آنکھ کا طیبا کی حسیں خاک
اے صاحبِ لولاک ﷺ

ہے نقشِ کفِ پا ترا تاروں کی جبیں پر
احسان تری ذات کا ہے ماہِ مبیں پر
تابندہ ترے نور سے ہے دامنِ افلاک
اے صاحبِ لولاک ﷺ

(ثنائے خواجہ از حافظ لدھیانوی)​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے