Zang E Alam Ka

زنگِ الم کا صیقل ہو کیوں نہ یار رونا
روشن دلی کا باعث ہے شمع وار رونا

جس جا پہ تم نے باتیں کی تھیں کھڑے ہو اک دن
جب دیکھنا وہ جاگہ بے اختیار رونا

آ لینے دے یہاں تک اُس گل کو ٹک تو رہ جا
پھر ساتھ میرے مل کر ابرِ بہار رونا

تو آ کے آستیں رکھ اس چشمِ تر پہ میری
پاوے جہاں میں میرا تا اشتہار رونا

محوِ خیال ہیں جو اُس شوخِ کم نما کے
درد و الم میں اُنکا ہے ننگ و عار رونا

جب سے جدا ہوا ہے وہ شوخ تب سے مجھ کو
نِت آہ آہ کرنا اور زار زار رونا

دم ہی نہیں ٹھہرتا آنسو کی کیا کہوں میں
جی سے حسنؔ پڑی ہے اب درکنار رونا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے