Yoon Bhi Bhook Mita

یُوں بھی بُھوک مِٹا سکتا ہے
بندہ مٹّی کھا سکتا ہے

اِک لقمے کی اُجرت کیا ہے
اِک مزدور بتا سکتا ہے

جنگل نوحہ پڑھ سکتے ہیں
دریا گیت سُنا سکتا ہے

خوشبو جیسی لڑکی کا دِل
پُھولوں میں گبھرا سکتا ہے

آہستہ سے پاؤں رکھنا
کمرہ شور مچا سکتا ہے

آنکھوں سے ہجرت کا مطلب
ایک آنسو سمجھا سکتا ہے

اِک سناٹا  آوازوں میں
خاموشی سے آ سکتا ہے

گنگا سیدھی بہہ سکتی ہے
پانی غوطہ کھا سکتا ہے

بیماروں سی شکل بناؤ
کوئی دیکھنے  آ سکتا ہے

کس پتّھر کے دِل میں کیا ہے
آئینہ بتلا سکتا ہے

جبرائیل سے آگے، عامی
عشق مسافر جا سکتا ہے

عمران عامی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے