یوم مزدور

دیوار پہ مزدور کی تصویر سجا کر
اخبار کے کونے میں خبر ایک لگا کر
کچھ کارڈ بھی مزدور کے ہاتھوں میں اٹھا کر
دو چار غریبوں کو بھی دھرتی پہ بٹھا کر
ان میں سے کسی ایک کو اسٹیج پر لا کر
پھر اس کی کہانی سبھی لوگوں کو سنا کر
تقریر کرا کر تو کبھی تالی بجا کر
مزدور کو مزدور کا عرفان دلا کر
اور اپنے تئیں کار مقدس کو نبھا کر
ہر سال یہ احسان جتاتے ہیں بڑے لوگ
مزدور کا پھر جشن مناتے ہیں بڑے لوگ
نیل احمد

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے