Yeh Udaasi

یہ اُداسی سدا بحال رہے
دلِ برباد یہ خیال رہے

چپ لگا کر چلا گیا وہ مجھے
میرے دل میں مرے سوال رہے

عکس کھینچا کروں میں پانی سے
اور خالی ہی میرا جال رہے

رات دن بارشیں رہیں غم کی
موسم ِ درد سارا سال رہے

کاش ایسا بھی ہو کبھی لودھی
جسم اُٹھ جائیں اور وصال رہے

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے