یہ کارِ خیر ہے،اسکو نہ کارِ بد سمجھو

یہ کارِ خیر ہے،اسکو نہ کارِ بد سمجھو
مجھے تباہ کرو،اور اسے مدد سمجھو
مَیں اس کہانی میں ترمیم کر کے لایا ہوں
جو تم کو پہلے سنائی تھی،مسترد سمجھو
مجھے خدا سے نہیں ہے کوئی گلہ لیکن
تم آدمی ہو تو پھر آدمی کی حد سمجھو
یہ صرف پیڑ نہیں ہے صدی کا قصہ ہے
یہ جو بھی بات کرے اسکو مستند سمجھو
یہاں کسی نے بھی آئندگاں نہیں دیکھے
سو جو گزار چکے ہو۔۔وہی اَبَد سمجھو
عابد ملک

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے