یاں تک آئے اپنے سہارے

یاں تک آئے اپنے سہارے
آگے وحشت جس کو پکارے
جس کو اتنا ڈھونڈ رہے ہیں
جانے وہ کس گھاٹ اتارے
تیری آس پہ آرزوؤں نے
ہر رستے میں پاؤں پسارے
ہم نے جب پتوار سنبھالے
ابھرے طوفانوں سے کنارے
دنیا کو ہے شغل سے مطلب
تم ہارو یا باقیؔ ہارے
باقی صدیقی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے