Wo pyaar ab raha na

وہ پیار اب رہا نہ ترا اور نہ چاہ وہ
باتیں ہی ایک رہ گئیں کہنے کو آہ وہ

پوچھا جو حال اُس نے تو میں اور چپ ہوا
تا ضد میں آ کے لگ ہی پڑے خواہ مخواہ وہ

بے چین ہم کو آپ ہی کرتا ہے ناز سے
رکھتا ہے اور سر پہ ہمارے گناہ وہ

کہیو صبا کہ جسکو تو بٹھلا گیا تھا سو
جوں نقشِ پا پڑا تری دیکھے ہے راہ وہ

مدت سے اُسکی ابرو سے واقف ہی ہم نہیں
شمشیر کی رہی نہیں ہم کو نگاہ وہ

احوال کہہ کے اپنا سبک ہوں میں کس لیے
کیا دیکھتا نہیں مرا حالِ تباہ وہ

پکا ہے ایک اُسکو سمجھتا ہوں خوب میں
اُستاد اپنے کام میں ہے رشکِ ماہ وہ

توڑی نہیں ہے صاف رکھی ہے ابھی لگی
آتا ہے اس طرف بھی نکل گاہ گاہ وہ

تو ہی نباہ اُس سے جو چاہے تو کر حسنؔ
اس پر نہ پھولیو کہ کرے گا نباہ وہ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے