Waqt Per Se Naqab

وقت پر سے نقاب اُٹھا دیا ہے
خواب جیسا بھی تھا سُنا دیا ہے

بارِ دوش اس لیے بنا تھا کیا
کچھ اُتارا ہے کچھ گرا دیا ہے

وصل میں اب خلل نہیں پڑتا
ہجر کا دائرہ بڑھا دیا ہے

کچھ اضافہ کیا ہے کچھ ترمیم
خود کو اک واقعہ بنا دیا ہے

ہم کسی دھول کی بھی دھول نہیں
ہمیں مٹی نے یوں بھلا دیا ہے

وقت بے وقت کی خموشی نے
وقت پر بولنا سکھا دیا ہے

شامِ تنہائی تجھ سے کیسا حساب
تجھ کو اپنے علاوہ کیا دیا ہے

دُکھ سنا ہے بغور منزل کا
اور منزل کو راستہ دیا ہے

اب جگہ ہی جگہ ہے رہنے کو
گھر کے اندر کا گھر گرا دیا ہے

اک سر سامنے کا ہم اور تم
دوسرے کو کہیں گنوا دیا ہے

شاہین عباس

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے