Wadaa Wasal Ky Aifaa Sy

وعدۂ وصل کے ایفا سے پشیماں ہو کر

وہ تصور میں بھی آتے ہیں تو پنہاں ہو کر

شوق دیدار شہیدوں کو ہے کون ان سے کہے

سیر کو جائیں سوئے گورِ غریباں ہو کر

فاتحہ پڑھ کے مری قبر سے قاتل جو اٹھا

خاک اڑ اڑ کے لپٹنے لگی ارماں ہو کر

میں شبِ وعدہ تصور میں انہیں لے آیا

در پہ بیٹھے ہی رہے غیر نگہباں ہو کر

شمع تربت پہ مری دیکھ کے بے مونس و یار

پھول تا صبح چڑھاتی رہی گریاں ہو کر

رات بھر ڈر ہی رہا صبح کے ہونے کا قمر

وصل کی رات کٹی ہے شبِ ہجراں ہو کر

قمر جلال آبادی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے