فروری 5, 2023
wali ullah wali
غزل بقلم محمد ولی اللّٰہ ولی

وہ جو ملتا ہے کچھ فائدہ دیکھ کر
مجھ کو اپنا کہے بھی تو کیا دیکھ کر

بعد مرنے کے آنکھیں کھلی رہ گئیں
تاکہ آئے کوئی دَر کھلا دیکھ کر

رُخ سے پردہ ہٹا کر یہ اُس نے کہا
لوگ پاگل ہوئے جانے کیا دیکھ کر

تاکہ اُس کی فضیلت مسلم رہے
چاند چھُپتا ہے کالی گھٹا دیکھ کر

تجھ کو معلوم ہے اے مسیحا مرے
درد بڑھتا ہے اکثر دوا دیکھ کر

وہ جو رکھتے ہیں منزل پہ اپنی نظر
راہ چلتے نہیں فاصلہ دیکھ کر

ہے ستم کیا؟ ستم کی علامت ہے کیا؟
میں نے سمجھا ہے چہرہ ترا دیکھ کر

کیا گزرتی ہے آنکھوں پہ مت پوچھیے
اپنے خوابوں کو لٹتا ہوا دیکھ کر

آئینہ بن گئے ہیں یہ دیر و حرم
در پہ تیرے مِرا سر جھُکا دیکھ کر

دیکھ کر مجھ کو ہنستی ہے دنیا ولیؔ
جیسے پاگل ہنسے آئینہ دیکھ کر

ولی اللہ ولیؔ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے