اُردُو ادب کی اربابِ غزل

اُردُو ادب کی اربابِ غزل
تبصرہ:
(نعمان حیدر حامی)
شروع کرتا ہوں الللہﷻ کے پاک بابرکت نام سے جو دِلوں کے چھپے بھید خوب جانتا ہے۔
کافی عرصہ پہلے میرے دہم کلاس کے سالانہ امتحان ختم ہوئے تو چند دن بعد کرونا وائرس کی وجہ سے لاک ڈاؤن لگا دیا گیا۔ ان دنوں میں نے نیا موبائل بھی لیا تھا تو اپنے کلام کو کمپوز کر کے ان کو سوشل میڈیا پر چلا دیتا حتٰی کہ میرا سارا دن سوشل میڈیا پر گزرتا۔
ان دنوں میرا رابطہ ایک ایسی نامور شخصیت سے ہوا جو کسی تعارف کی محتاج نہیں ان کے قلم سے نکلنے والے ہر الفاظ ہیروں کی طرح قرطاس کی زینت بنتے ہیں۔ ان کے ہر کلام سے محبت , سچائی اور پیار کا جذبہ عیاں ہے۔
جی ہاں قارئین تو میں بات کر رہا ہوں "محترمہ سیدہ شفقت حیاتؔ شفق صاحبہ” ادب کی ایک بےمثال شہزادی کی جس کو میرے خیال میں اگر اُردُو ادب کی ” ارباب غزل ” کہا جائے تو غلط نہ ہوگا۔ آپ کا تعلق پاکستان کے تاریخی اور خوبصورت شہر ٹیکسلا ضلع راولپنڈی سے ہے۔
آپ کی خوبصورت ادبی شہکار کتاب ” میری تصویر نامکمل ہے ” جنوری 2020 کو منظرِ عام پر آئی ہے جو کہ 127 صحفات پر مشتمل ہے۔
کتاب "میری تصویر نامکمل ہے ” کا انتساب آپ نے اپنے پیارے اور خوبصورت بیٹے ” عمر ہاشمی ” کے نام کیا ہے۔
کتاب کے بارے میں مضامین پاکستان کے مشہور شعراء نے تحریر کیے ہیں جن میں ” ” رانا سعید دوشی ” , ” جمیل اشرف قریشی ” نے تحریر کیے ہیں۔ جبکہ کتاب کی تزئین کے اندرونی فلیپس میں اپنے خوبصورت خیالات ” سلمان باسط صاحب ” , ” محترمہ عائشہ مسعود ملک صاحبہ ” قلم بند کیے ہیں۔
کتاب میں ” حمد و نعت ” کے علاوہ 45 غزلیات اور 8 خوبصورت نظمیں ہیں۔
کتاب ” میری تصویر نامکمل ہے ” اُردُو ادب میں ایک مثالی اضافہ ہے۔
انہوں نے مجھے اپنے ہاتھوں سے اپنے ادبی شہکار سے نوازا تو کتاب پڑھ کر معلوم ہوا کہ آپ کی اُردو ادب میں آمد اُردُو ادب میں چار چاند لگانے کے مترادف ہے۔
المختصر یہ کہ کتاب کے بارے میں جتنا لکھوں کم ہے۔
ویسے تو کتاب کی ہر غزل اور نظم اپنا ایک الگ سخن رکھتی ہے لیکن وہ اشعار جو دل و دماغ میں گھر کر جاتے ہیں وہ اشعار قارئین ملاحظہ فرمائیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر پر مرے جو دھوپ میں ٹکڑا گھٹا کا ہے
مجھ پر کرم یہ خاص مرے کبریا کا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رکھنا بخدایا محشر میں پردہ حیات ؔ کا
نہ وصف بندگی نہ سلیقہ دعا کا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اندھیرا چھایا تھا زندگی میں گھری تھی شفقت تیرگی میں
غموں سے جس نے مجھے نکلا میرا نبیﷺ ہے میرا نبیﷺ ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم ہمارے نہ رہے اور کسی کے ہو کر
ہم کسی اور کے ہو کر بھی تمھارے ہی رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب اس کے انتظار میں ہم تو حیات ؔ سے گئے
پھر اس کے بعد کیا ہو آج بھی شام ڈھل گئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پاؤں پڑ کر بھی منا لیتی حیات ؔ اس کو میں
اُس پہ لازم تھا کہ اک بار پلٹ کر دیکھے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شفقت ؔ تمھارے شہر کے لوگوں کا کیا بنا
کچھ کا سنا ہے عشق میں نقصان ہو گیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بیتے پل پل آج بھی شفقت ؔ
آ جاتے ہیں دل بہلانے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیسے خوشبو کا کوئی جھونکا ہو
مجھ کو ایسے ملا پیام ترا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آخر پر اپنی پسندیدہ غزل سے اجازت چاہتا ہوں اور دعا کرتا ہوں الللہﷻ اس ادب کی شمع کو سدا روشنی سے مسکراتا رکھے۔ آمین۔
غزل
دل کسی اور سے لگاؤں کیا
کیا کہا ، تم کو بھول جاؤں کیا
تم نے اپنا بسا لیا ہے تو میں
گھر کسی اور کا بساؤں کیا
میں جو کہتی تھی تجھ پہ مرتی ہوں
اب تجھے مر کے بھی دکھاؤں کیا
چوٹ کھا کر بھی کیا میں ہنستی رہوں
دل جو ٹوٹے تو کھکھلاؤں کیا
یونہی پیچھے پڑے ہوئے ہو مرے
بات ہے ہی نہیں بتاؤں کیا
چھپ نہیں سکتے پیار اور خوشبو
میں کسی سے بھلا چھپاؤں کیا
جس سے دل مل نہیں سکا شفقتؔ
اس سے اب ہاتھ بھی ملاؤں کیا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

One comment

  • شاعر نعمان حیدر حامی ؔ

    بہت بہت مشکور ہوں ” سلام اُردو” ٹیم کا جو دن رات محنت کر کے ہمارے ادب کو ایک نئئ پہچان دے رہے ہیں۔ ” میری تصویر نامکمل ہے ” جیسی ادب کی "درخشنده” کتاب پر تبصرہ کرنا اور سَلام اُردُو جیسی خوبصورت ویب سائٹ پر میرے تبصرے کو جگہ دینا میرے لیے دونوں طرف سے فخر ہے۔
    شفقت حیات ؔ شفق صاحبہ ایک نہایت اعلٰی کردار خوبصورت اخلاق کی مالک شاعرہ ہیں۔ انہوں نے ہر مشکل کا مقابلہ کر کے ادب کی خدمت کو جاری رکھا ہوا ہے۔
    اُردُو ادب میں اس کی کتاب "میری تصویر نامکمل ہے” اردو ادب سے انکی محبت کا منہ بولتا ثبوت ہے۔
    میری دل سے دعا ہے الللہﷻ آپکو زندگی کے ہر امتحان میں کامیابیوں سے ہمکنار کرتا رہے۔ آمین۔
    دعاگو :
    شاعر نعمان حیدر حامی ؔ

    جواب دیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے