تمہارے وہاں سے یہاں آتے آتے

تمہارے وہاں سے یہاں آتے آتے
بہار آ گئی ہے خزاں آتے آتے
قدم دو قدم کا تو رستہ ہے سارا
کہاں کھو گئے ہو یہاں آتے آتے
کوئی شوق، کوئی تمنا تھی اس کو
سنی راہ میں داستاں آتے آتے
تری صورتیں ،تیرے سائے فلک پر
یہ کیا بن گئیں بدلیاں آتے آتے
بھٹکنے کے دن ہیں ، بھٹکنے کی راتیں
کہیں کھو نہ جانا یہاں آتے آتے
یہ رنگت، یہ حالت، یہ چہرہ، یہ مہرہ
یہ کیا کر لیا مہرباں آتے آتے
تعاقب عدیم اس کا کر لے نہ کوئی
مٹاتا گیا وہ نشاں آتے آتے
بلایا تھا دو چار یاروں کو میں نے
عدیم آ گیا اک جہاں آتے آتے
عدیم ہاشمی 

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے