تم سے کہنا تھا

اِک نظر کی فرصت میں
سطحِ دل پہ کھل اُٹھے
لفظ بھی، معانی بھی
خامشی کی جھلمل میں
آگ بھی تھی، پانی بھی
دِل نے دھڑکنوں سے بھی
جو کہی نہیں اب تک
اَن کہی کہانی بھی
ان کہی کہانی میں
آنکھ بھر تمنّا تھی
ہاتھ بھر کی دُوری پر
لمس بھر کی قربت تھی
لمحہ بھر کا سپنا تھا
ایوب خاور 

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے