تم نہ جان پاؤ گے

شہر کے دکاندارو ، کاروبار ِ الفت میں
سود کیا ۔۔۔ زِ یاں کیا ہے ۔۔
تم نہ جان پاؤ گے ۔۔۔

دل کے دام کتنے ہیں ۔۔خواب کتنے مہنگے ہیں
اور۔۔۔۔ ۔۔ نقد ِ جان کیا ہے ۔۔
تم نہ جان پاؤ گے ۔۔۔

کو ئی کیسے ملتا ہے ۔۔۔پھول کیسے کھلتا ہے
آنکھ کیسے جھکتی ہے ۔۔۔ سانس کیسے رکتی ہے
کیسے راہ نکلتی ہے ۔۔۔ کیسے بات چلتی ہے
شوخ کی زباں کیا ہے
تم نہ جان پاؤ گے

وصل کا سکوں کیا ہے ، ہجر کا جنوں کیا ہے
حسن کا فَسوں کیا ہے ۔۔عشق کا دَ روں کیا ہے
تم مریض ِ دانائی ۔۔۔ مصلحت کے شیدائی
راہ ِ گمرہاں کیا ہے۔۔۔۔
تم نہ جان پاؤ گے

جانتا ہوں میں تم کو ذوق ِ شاعری بھی ہے
شخصیت سجانے میں ، اِک یہ ماہری بھی ہے
پھر بھی حرف چنتے ہو ۔۔ صرف لفظ سنتے ہو ۔۔۔
اِن کے درمیاں کیا ہے ۔۔۔۔۔
تم نہ جان پاؤ گے

جاوید اختر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے