Tujhy Kya Nasaha Ahbaab

تجھے کیا ناصحا احباب خود سمجھائے جاتے ہیں

ادھر تو کھائے جاتا ہے ادھر وہ کھائے جاتے ہیں

چمن والوں سے جا کر اے نسیمِ صبح کہہ دینا

اسیرانِ قفس کے آج پر کٹوائے جاتے ہیں

کہیں بیڑی اٹکتی ہے کہیں زنجیر الجھتی ہے

بڑی مشکل سے دیوانے ترے دفنائے جاتے ہیں

انہیں غیروں کے گھر دیکھا ہے اور انکار ہے ان کو

میں باتیں پی رہا ہوں اور وہ قسمیں کھائے جاتے ہیں

خدا محفوظ رکھے نالہ ہائے شام فرقت سے

زمیں بھی کانپتی ہے آسماں تھرائے جاتے ہیں

کوئی دم اشک تھمتے ہی نہیں ایسا بھی کیا رونا

قمر دو چار دن کی بات ہے وہ آئے جاتے ہیں

قمر جلال آبادی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے