تجھ پہ یا خود پہ اعتبار کریں

تجھ پہ یا خود پہ اعتبار کریں
کوسنا رنگ اختیار کریں
تجربے کا یہی تقاضا ہے
آپ پر بھی نہ اعتبار کریں
پرسش غم نہیں ہے غم کا علاج
یہ تکلف نہ غمگسار کریں
حد نہیں انتظار کی کوئی
آگے ہم جتنا انتظار کریں
پتا پتا ہے مضمحل باقیؔ
ہم کہاں تک غم بہار کریں
باقی صدیقی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے