تو مری جان مرے دل ميں سمانا ،ہاں ناں

تو مری جان مرے دل ميں سمانا ،ہاں ناں
يہ ترا گهر هے بڑے شوق سے آنا،ہاں ناں
ہم نے جس درد کو جهيلا ہے تری فرقت ميں
اچها لگتا ہے وہ سب تجھ کو سنانا ،ہاں ناں
يوں گزاروں کہ محبت ميں امر کر ڈالوں
عمرِ رفتہ تو کبهی لوٹ کے آنا ،ہاں ناں
فکرِ دنيا نے محبت کا گلا گهونٹ ديا
ختم ہوتا هے وە مجنوں کا زمانہ ہاں ناں
اس کی تصوير اسے پهر سے دکها دی جاےُ
پهر سے آباد ہو يہ آئینہ خانہ ہاں ناں
ميں اسي عہد ميں زندە ہوں فرح پر اب تک
دل ميں تازە ہے وہی زخم پرانا ہاں ناں
سیدہ فرح شاہ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے