Tod Ke Sehr Yaad-E-Guzishta

توڑ کے سحر یادِ گزشتہ جشنِ بہاراں کیوں نہ کریں

خواب گلستاں دیکھنے والے عزمِ گلستاں کیوں نہ کریں

رونق بزم اک چیز ہے لیکن اور ہی ساماں کیوں نہ کریں

گھر میں چراغاں کرنے سے حاصل ، دل میں چراغاں کیوں نہ کریں

مست گھٹائیں جام بکف ، مخمور فضائیں توبہ شکن

شانِ کریمی تو ہی بتا پھر جرات عصیاںکیوں نہ کریں

حسن مجسم عشق و محبت عشق سراپا جذب و کشش

میری پریشانی کے فسانے ، ان کو پریشاں کیوں نہ کریں

دیدۂ رخ جاناں کی تلافی یادِ رخ جاناں ہی سہی

شام الم جب رنگ دکھائے ، شمع فروزاں کیں نہ کریں

موسمِ گل ہے ، گل کا جنوں اور گل کا جنوں ہے اپنا جنوں

موسمِ گل میں ہنس ہنس کر ہم چاکِ گریباں کیوں نہ کریں

ان کے بھی آخر سینے میں دل ہے ، دل میں خلش بھی ٹیس بھی ہے

پھر وہ قیدی دردِ محبت پرسش پنہاں کیوں نہ کریں

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے