Tery Farq E Naaz


تِرے فرقِ ناز پہ تاج ہے، مِرےدوشِ غم پہ گلِیم ہے​
تِری داستاں بھی عظیم ہے، مِری داستاں بھی عظیم ہے​

مِری کتنی سوچتی صُبْحوں کو یہ خیال زہْر پِلا گیا ​
کسی تپتے لمحے کی آہ ہے، کہ خِرامِ موجِ نسیم ہے​

تہِ خاک، کرمکِ دانہ جُو بھی شریک رقصِ حیات ہے​
نہ بس ایک جلوۂ طُور ہے، نہ بس ایک شوقِ کلِیم ہے​

یہ ہرایک سمت مسافتوں میں گندھی پڑی ہیں جو ساعتیں!​
تِری زندگی، مِری زندگی، اِنهی موسموں کی شمیم ہے​

کہِیں محْملوں کا غبار اُڑے، کہیں منزلوں کے دِیے جلیں​
خَمِ آسماں، رہِ کارواں ! نہ مُقام ہے، نہ مقیم ہے ​

حرم اور دِیر فسانہ ہے، یہی جلتی سانس زمانہ ہے!​
یہی گوشۂ دلِ نا صبور ہی، کنُجِ باغِ نعیم ہے​

مجید امجد ​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے