توازن اردو ادب پروگرام نمبر50

 
مجموعہ کلام
توازن اردو ادب
پروگرام نمبر50
گولڈن جوبلی پروگرام
بعنوان : سجدہ شکر /توبہ
یہ توازن اردو ادب کے لئے ایک سنگ میل ہے اور شکر کا مقام ہے
لیکن اس کے ساتھ ساتھ ہم ایک مشکل وقت سے گزر رہے ہیں.
تو ان ملی جلی کیفیات کو اپنے کلام میں بیان کرتے ہیں.
کامیاب زندگی کےلیے توازن و اعتدال ایک اہم قدر اور اصول ہے۔ افراط و تفریط سے احتراز کرتے ہوئے درمیانی راہ ہی بہترین ہے۔ ادب چونکہtawazun urdu ہماری زندگی سے جڑا ہوا ہے لہٰذا ہم تخلیقِ ادب میں توازن و اعتدال پہ چلتے ہوئے اخوت ورواداری ، باہمی محبت و احترام اور یگانگت کو فروغ دینے کے متمنی ہیں۔
توازن اردو ادب کی جانب سے ہفتہ وار آن لائین تنقیدی مشاعرہ 17 اپریل 2020 بروز جمعہ پیش کیا گیا۔ مشاعرے کا آغاز ہندوستانی وقت کے مطابق شام 30 :7 بجے جبکہ پاکستانی وقت کے مطابق 7 بجے ہوا۔
_______
مبصرین
مسعود حساس کویت،
ڈاکٹر لبنی آصف لاہور،
ظہور انور بہاولپور کینٹ،
حکیم نعمان انصاری میانوالی،
کامل جنٹیوی بھارت،
عامر یوسف لاہور پاکستان
سید زیرک حسین اسلام آباد
شہزاد نیر لاہور پاکستان
مہتمم پروگرام
عامرحسنی ملیشیا
صدارت
حکیم نعمان انصاری میانوالی پاکستان
مہمانِ خصوصی
اشرف علی اشرف سندھ پاکستان
مہمانِ اعزاز
اصغر شمیم،کولکاتا،بھارت
نظامت
مسعود حساس کویت
عظمیٰ خان گوندل یوکے
رپورٹ
روبینہ میر جموں و کشمیر بھارت
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
حمد باری تعالیٰ
خدا کے فضل و احساں ہم پہ بھاری
اسی نے خوب یہ دنیا سنواری
زمین و آسماں اس کا نشاں ہے
جہاں میں دیکھ اس جیسا کہاں ہے
یہ پھولوں کی مہک اور تتلیاں سب
یہ رنگینی یہ موسم ، زندگی سب
یہ جنگل، جانور، چڑیوں کی چہکار
ہر اک شے میں نظر آئے ہے شہکار
حسیں تر وادیاں، دلکش نظارے
اگر سوچو، یہ سب اس کے سہارے
ہر اک لاچار کا وہ آسرا ہے
ہر اک بیمار کو اُس سے شفا ہے
کہیں اُس سا کوئی رب الوریٰ ہے
نہیں ایسا کوئی بھی بادشاہ ہے
مری کمزوریاں سب جانتا ہے
پھر ان کو مغفرت سے ڈھانپتا ہے
وہ مالک ہے رکھو جو ذکر جاری
تمھارے فائدے میں آہ و زاری
صمد ہے بے نیازی ہے ازل سے
پھر اس کو کیا غرض تیری غزل سے
اسے حمد و ثنا سے کیا ملے گا ؟
بڑھے گا عامرؔ ایسے تو پھلے گا
عامرؔحسنی ملیشیا
۱۶اپریل ۲۰۲۰
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انکے قدموں کی خاک ہو جاؤں
یا الٰہی میں پاک ہو جاؤں
انکی الفت ہو میرا سرمایہ
مثلِ اھلِ خطاب ہو جاؤں
آنکی پاکیزگی سے ہو الفت
یعنی شفّاف آب ہو جاؤں
ان پہ قربان میری ہر خواہش
ایسی کامل میں ذات ہو جاؤں
اے مرے دل تڑپ نہ یہ کم ہو
باغِ طیبہ کی خاک ہو جاؤں
قلبِ عاصی کی یہ تمنا ہے
تابعِ شاہِ پاک ہو جاؤں
عظمیٰ خان گوندل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجدہء شکرکے حوالے سے یہ اعتراف کرنا چاہوں گی کہ میرے پاک پروردگار نے جس قدر نوازا ہے اگر تا عمر بھی سجدے میں سر رکھ کر شکرانہ ہی ادا کرتی رہوں تب بھی رب العزت کا حق ادا نہ ھو سکےگا کروڑ ہا بار
الحمدللہ
اور
توبہ کرنے اور اس پر کار بند رہنے کی توفیق اللہ تعالی ہم سب کوعطا کرے۔آمین
سجدہءشکر
ایک شعر
جتنے سجدے ہوں جبیں کے تیری چوکھٹ کے ہوں بس
میرے ماتھے پر غلامی کا نگینہ چاہیے
دوسرا شعر
یہ میرا خواب ہے اس خواب کو پورا کردے
تیری چوکھٹ پہ شہا اپنی جبیں رکھتی ہوں
سجدہء عشق
صبحِ پر نور کا نزول بتول
ہیں جمالِ رخِ رسول بتول
آپ کے سنگ_ در پہ میرا بھی
سجدہء عشق ہو قبول بتول
توبہ
توبہ کا دروازہ کھلا ھے آخر تک
لیکن کیا ہم لوگ گناہ کئے جائیں
توبہ سے در بند گناہوں کا ہو جائے
یوں اس کو ہم زادِ راہ کئے جائیں
ڈاکٹر لبنیٰ آصف
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
کٹ رہی ہے زندگی درد کا سماں لیے
چیختی پکارتی نوحہ اورفغاں لیے
موت کابھی رقص ہےمُفلسی کا دَور بھی
روتےہیں غریب بھی دردکچھ گِراں لیے
کچھ غریب ہیں کھڑے انتظارمیں یہاں
کچھ سخی ہیں آرہے کھانےکی دُکاں لیے
مرگٸے ہیں لوگ کچھ بھوک سےبھی پھریہاں
چہروں پہ وہ فاقے اور درد کےنشاں لیے
بات میری مان تُوکچھ تو غور کرذرا
پھر رہاہےاب بھی تُوجینےکاگُماں لیے
چل رہی ہےسانس جوشُکرتم ادا کرو
توبتہ النصوح کا ذکر تم رواں لیے
جوگزرگٸی ہےوہ اُس کوبھول جاٶتم
باقی تم گزار دو حمد کا بیاں لیے
جب تمھارا ہو سفر جانبِ خُدا کبھی
حالتِ بھی سجدہ ہو تربہ ترزباں لیے
ڈاکٹرمحمدالیاس عاجز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
توبہ
وہ آرام دہ مسہری پر دراز ماضی میں جھانک رہا تھا ۔۔اآفس میں بیٹھے بزرگ ہاتھ جوڑے التجا کررہے تھے ۔۔۔میرے بچے کے خوابوں کو ٹوٹنے سے بچائیے ؟
دیکھیے !۔۔میرے پاس وقت نہیں ہے یہ فضول باتیں سننے کے لیے ۔۔اگر انجینئرنگ میں ایڈمیشن چاہیے تو ۔۔ ۔۔سیکرٹری کے پاس جمع کرادیجیے۔۔۔
ہم نے تو اتنے پیسے تو کبھی خواب میں بھی نہیں دیکھے۔۔وہ اور بھی کچھ کہتا گیا ۔۔پر وہ آفس کے باہر نکل چکا تھا ۔۔۔۔اس کے ذہن میں مصروف زندگی کے واقعات یکے بعد دیگرے آآ کر کچوکے لگا رہے تھے ۔۔۔میڈیکل کی سیٹ کی نیلامی ۔۔۔ادارے کے ایک کالج کی پرنسپل شپ کے لیے ۔۔۔اہلیت کی بجائے ۔۔۔مٹھی گرم کرنے والے کو اولیت ۔۔۔اس کے سامنے کوئی دم نہیں مارسکتا تھا ۔۔۔تعلیمی انجمن کا صدر جو تھا ۔
شب وروز مصروفیت میں گزرتے ۔۔بچوں سے ملنے کی فرصت نہ ہوتی ۔۔۔میٹینگیں،فلاحی اداروں کی صدارت ۔۔ادبی تنظیموں کی سرپرستی ۔۔شہر اور شہر سے باہر رفاہ عام کی مجالس ۔۔پریس کانفرنس ۔۔اخبار میں صف اول پر مسکراہٹ بکھیرتی تصاویر ۔۔۔ان آئینوں کے پس آئینہ کیا ۔۔۔؟؟۔۔بہت کم اس سے واقف تھے ۔
پندرہ دن پہلے ہلکا سا بخار محسوس ہوا ۔۔اور خشک کھانسی ۔۔۔فیملی ڈاکٹر نے وبائی مرض کا شبہ ظاہر کر جانچ کا مشورہ دیا ۔
نہیں ۔۔بڑے بیٹے نے یکسر مشورے کو مسترد کر دیا ۔
کیوں ؟۔۔بیوی نے سوال کیا ۔
ہم سب کو جانچ اور دیگر مراحل سے گزرنا ہوگا ۔۔ہمارا سارا خاندان زد میں آجائے گا ۔
پھر کیا کیا جائے ؟؟؟ بہت سے سوالات ابھرے ۔۔الگ الگ مشورے ۔۔بھانت بھانت کی باتیں ۔۔رد وکد کے بعد ۔۔۔بنگلہ کی اوپری منزل کے آخری کمرے میں قید کر دیا گیا ۔
وہ سوچ رہا تھا ۔۔اب میرے پاس وقت ہی وقت ہے ۔۔۔مگر دوسروں کو مجھے دینے کے لیے وقت نہیں ۔۔۔ملازم دو وقت کھانا دے جاتا ہے ۔۔!!
دنیا سے تعلق منقطع ۔۔اب تو سیل فون بھی نہیں کہ کسی سے گپ شپ ہی کرلوں ۔۔وہ آسمان کی طرف ٹکٹکی باندھے سوچ رہا تھا ۔۔میں جن کے لیے اتنا مصروف رہا وہ پلٹ کر نہیں دیکھ رہے ۔۔چند قطرے رخسار پر ڈھ گئے ۔۔۔احساس ندامت سے سر جھک گیا ۔۔۔وہ پلٹ آیا تھا بلندی سے پستی کی طرف ۔۔۔پلٹ آنے کا نام ہی تو توبہ ہے !!!
ڈاکٹر ارشاد خان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
بلا ہے، آفریں ہے وہ پری، صاحب!
گُلوں سے بھی حسیں ہے وہ پری، صاحب!
ادا مَیں کیوں نہ کرتا شُکر کا سجدہ
رگِ جاں سے قریں ہے وہ پری، صاحب!
بتاؤں آپ کو مَیں اُس کی کیا خوبی
ذہینوں میں ذہیں ہے وہ پری، صاحب!
اشارہ دل کی جانب کر کے ہر اک کو
بتاؤں گا یہیں ہے وہ پری، صاحب!
ردیف و قافیہ کا حُسن بھی ہے اور
غزل کی جانشیں ہے وہ پری، صاحب!
اُسے میری محبّت پر یقیں ہے اور
مِرا کامل یقیں ہے وہ پری، صاحب!
جو کوئی اُس کو دیکھے گا فدا ہو گا
کہ ایسی مہہ جبیں ہے وہ پری، صاحب!
کسی کے عشق میں وہ ہار جائے گی
نہیں، ایسی نہیں ہے وہ پری، صاحب!
اُسے دیکھیں گے، اُس پر مر مِٹیں گے آپ
کہ دلکش دل نشیں ہے وہ پری، صاحب!
اسامہ زاہروی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدا کے سامنے اے مؤمنو سر یہ جھکاؤ تم
اسی کے روبرو دست دعا ہردم اٹھاؤ تم۔۔
وہی ہر قلب مضطر کی صدائیں سننے والا ہے
اسی کو داستان درد دل اپنی سناؤ تم
لپٹ جاؤ اسی کے سنگ در سے گر بھلا چاہو
وہی مشکل کشا ہے اسکے آگےگڑگڑاو تم ۔
, معاصی سے کرو توبہ کھلا ہے باب توبہ کا
ڈرو اس وقت سے توفیق توبہ بھی نہ پاؤ تم۔۔۔
سر عرش بریں جاتی ہیں آہیں دردمندوں کی
غریب و بے سہارا پر ستم ہرگز نہ ڈھاؤ تم۔۔
بلائیں آج جو تم کو ہراک جانب سے گھیرے ہیں
خدا ناراض ہے تم سے اسے لوگو مناؤ تم۔۔۔
میسر وقت پر ہو جایے جو اس پر رہو شاکر
زباں پر شکوۂ تقدیر تو ہرگز نہ لاؤ تم۔۔
یہ کیا کم ہے کہ اسنےدولت ایماں عطا کی ہے
یقیں رکھو خدا پر اسکی جانب لوٹ جاؤ تم۔۔
صبا انساں وہی ہے جو کسی کے کام آجائے
کسی روتے ہوئے انسان کو ہر دم ہنساؤ تم۔۔
نسیم خانم صبا۔کرناٹک۔۔۔انڈیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ جو درپیش وبال ہے
یہ شامتِ اعمال ہے
حالات ہو گئے دگرگوں
بڑا ہی بُرا حال ہے
شش جہات رنج و الم
مسرتوں کا قال ہے
ہے پھوٹی اک عجب وبا
کیا ہر بشر نڈھال ہے
ہر ایک دن ہے غم بھرا
مصیبتوں کا سال ہے
خوشی کا کوئی پَل نہیں
بس ہر گھڑی ملال ہے
بندگانِ حق توبہ کرو
یہی میرا خیال ہے
اِس عارضے کو روکنے کو
توبہ ہی فقط ڈھال ہے
ہر طرف ہے بے بسی
جینا ہوا محال ہے
ویراں نگر، گلی، شہر
ملے بشر خال خال ہے
عامر سہیل
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
دل کو کسی کے واسطے پاگل نہیں کیا
یعنی کہ میں نے عشق مسلسل نہیں کیا
اس نے بھی لوٹ آنے کی حامی نہیں بھری
میں نے بھی اپنے در کو مقفّل نہیں کیا
حل کر دیئے انہوں نے کئی مسئلے مرے
اک مسئلہءِ وصل مگر حل نہیں کیا
جانے کب اور کون نکلنا پسند کرے
رشتوں کو میں نے اس لیئے دلدل نہیں کیا
فرحان اضطراب کا عالم بجا مگر
توبہ کا در خدا نے مقفّل نہیں کیا
فرحان حیدر٩ اپریل ٢٠٢٠
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اک بارمانگیں مالک تجھ سے
عطا تو ہم کو کر دے گا
ہاتھ پھیلاے لو لگائے
مالک تجھ سے مانگنے آے
مسجد، مندر بند پڑے ہیں
سر کو جھکائےسارے کھڑے ہیں
چھوڑ دیئے سب گورکھ دھندے
قید میں ہیں سب تیرے بندے
توڑ دے مالک سارے پھندے
اب نہ ستائیں تیرے بندے
تیری نعمتیں بے حساب
تیری عنایتیں بے شمار
توبہ کے ہیں طالب
مولا تیرے گنہگار
وبا سے ہم کو رہائی دے دے
سزا سے ہم کو رہائی دےدے
سب کی خالی۔جھولی۔بھر دے
معاف تو سب کو مالک کردے
شازیہ تبسم شازی
رحیم یار خان۔پاکستان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس دور کے ہے منصف و اخبار سے توبہ
کانٹوں سے بغاوت مِری گلزار سے توبہ
توبہ کے تقدس کو بھی رُسوا کیا ہم نے
توبہ بھی ہمارے کرے اطوار سے توبہ
شاعر ہیں کے سرقے پہ کمر باندھ چکے ہیں
اِمروز کے اِس شاعر و اشعار سے توبہ
خاموش رہے ظلم کو سہہ کر جو ہمیشہ
اپنی تو ہے اس شخص کے افکار سے توبہ
حیف اس پہ ہے تکمیلِ وفا کر نہ سکے جو
اُس عاشق و معشوق سے اُس یار سے توبہ
دستورِ وفا کو تیرے انداز نے نگلا
اُو چاہنے والے تیرے اطوار سے توبہ
رو رو کے تِری لاش پہ ہنستی ہے شرافت
ائے سر تِری اس ریشمی دستار سے توبہ
انساں کو جو اُلفت کا پیمبر نہ بنائے
اُس خالی عمارت کے ہے مینار سے توبہ
قاقیش کہ اب اپنے ہی آنگن میں ہے خطرہ
ائے کاش کہ ہوتی فقط اغیار سے توبہ
قاقیش
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شکر و توبہ
خدا کے فضل و احساں کے ترانے
میں گاؤں، آئے دن، آنے بہانے
خدا کو پیار سے جو بھی پکارے
وہ دامن میں بھرے اس کے ستارے
یہ دنیا اس کے آگے کچھ نہیں ہے
جو اس کو پاؤ تو سب کچھ وہیں ہے
توجہ پھر سے انسانوں کی پھیرے
وباؤں اور طوفانوں میں گھیرے
اسی کے حکم سے زیر و زبر ہو
تلاطم خیز پل میں بحر و بر ہو
کرو توبہ اسی کو تھام لو ناں
پھر اس کے سامنے کیا ہے کرونا
اگر حمد و ثنا میں ڈوب جاؤ
تبھی اللہ کی رحمت بھی پاؤ
کرو انسان کی خدمت گزاری
یہی عامرؔ رہے خواہش تمہاری
عامرؔحسنی ملیشیا
۱۶اپریل۲۰۲۰
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
ترے خیال کو فرقت میں جب لحاف کیا
دل خراب کو یادوں نے کوہِ قاف کیا
خدا کا شکر ہے جو آج اعتراف کیا
کہ اس نے ٹھوس حقائق سے انحراف کیا
سنا جو، جھیل کے آیا ہے عزلتوں کے عذاب
قصاص ہجر کا ہم نے اسے معاف کیا
مرورِ وقت نے دھندلا دیے نقوش اتنے
ملا نہ عکس بہت آئینے کو صاف کیا
خیال یوں بھی در آیا ترا عبادت میں
کہ جیسے دزد نے دیوار میں شگاف کیا
دل و جبین تشکر سے سجدہ ریز ہوئے
نگاہ نے ترے پیکر کا جب طواف کیا
ہو کیسے توبہ کی تصدیق تب تلک یارب !
صدا نہ آئے گی جب تک”تجھے معاف کیا”
خواجہ ثقلین
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
غزل
وقت مشکل ہے بس دعا کیجئے
"توبہ توبہ خدا خدا کیجئے”
یاد گلشن کی آ رہی ہے ہمیں
اس قفس سے ہمیں رہا کیجئے
پاس آنے کا سوچئے بھی نہیں
دور ہی سے ابھی ملا کیجئے
پہلے جیسا سکون ہو دل کو
کوئی ایسا تو معجزہ کیجئے
ہم بھی جائیں گے اُس جگہ اصغر
ہے سکوں کس جگہ پتا کیجئے
اصغر شمیم ،کولکاتا ،انڈیا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اپنی عِبادتوں کی لذّت مجھے نصیب
سَجدے میں ہورہی ہے رِفعَت مجھےنصیب
اب اس سے بڑھ کے ہونگی کیسی عِنایتیں
توبہ کا در کُھلا ہے خَلوت مجھے نصیب
دنیا کی حَسرتوں کی حاجَت نہیں رہی
ایمان کی ہے لیکن دولت مجھے نصیب
کرتا رہوں میں تیرے گھر کی زیارتیں
ہوتی رہے خُدایا رِقّت مجھے نصیب
سجدہء شُکر کیونکر اب بھی ادا نہ ہو
راحَت مجھے نصیب ہےبَرکت مجھے نصیب
جب ہونَزع کاعالَم اپنےنبؐی کےصَدقے
کلمے کی بَس ہو یارَب مُہلت مجھے نصیب
یارَب توجن سے راضی مولاجو تجھ سے راضی
ہوتی رہے بس اُنکی صُحبت مجھے نصیب
اک آخری گُذارِش بس آخری گُذارِش
مرنے کے بعد کرنا جَنّت مجھے نصیب
خوش قِسمتوں میں اشرف میراشُمار ہوگا
میں کہ نَصیب وَر ہوں خِلعت مجھے نصیب
اشرف علی اشرف سندھ پاکستان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سجدہ شکر/توبہ!
سجدہ شکربجالاءو،کرواب توبہ۔
اب نہیں کرتےتوپھرہوگی بھلاکب توبہ؟
قوم یونس سےسبق سیکھ لےمسلم امہ۔
یک زباں ہوکےکہےاب،اےمرےرب،توبہ!
نعمتیں بھول کےابلیس سےیاری کیوں کی؟
جلدبازآءوکہودل سے کہ یارب،توبہ!
گرہوں سب باغی رب،دیس سےہجرت کرلو۔
ورنہ ہرظلم کروترک،کروسب توبہ۔
ہے”کرونا”کی یہ تنبیہ جہاں والوں کو۔
ٹھیک ہوجائےگاسب،کرلوگےتم جب،توبہ۔
وقت جب ہاتھ سے نعمان نکل جائے تو۔
مثل فرعون اکارت گئی پھر،سب توبہ!
نعمان انصاری۔صدربزم فکرتھل
خطبہ صدارت
خطبئہ صدارت۔
میں توازن اردوادب کی انتظامیہ کاممنون ہوں کہ مجھ ناچیز کوتوبہ کےموضوع پرہونےوالےگولڈن جوبلی عالمی فاصلاتی مشاعرے کی صدارت کااعزازبخشا۔
الحمدللہ نیکیوں کے موسم بہار۔رمضان۔آتاتوازل سےہےمگررسول رحمت کی ہجرت کےبعدبننےوالی ریاست مدینہ سےاللہ نےاسےعجب شان عطاکی ہے۔ توازن اردوادب کےمشاعروں نےجوبامقصدموضوعات عہدنو اورحالات کی مناسبت سےدیےہیں وہ بھی اس عہد منافقت میں قابل ستائش ہیں۔
انبیائے کرام کاسلسلہ ختم ہونےکےبعدانسانیت کی رہبری ان علما،اہل قلم اورشعرائےامت کی ذمہ داری ہےجومعرفت حق رکھتےہیں کہ رجوع الی اللہ اورتوبہ جیسے موضوعات پرامت کوبیدارکریں۔
اردوعالمی زبان ہےاوراسکےذریعےمشکل عالمی حالات اورعالمی آزمائش کروناکےدوران ہم بیدارئ انسانیت کاالحمدللہ قلمی جہاد کررہےہیں۔رب کائینات ہماری کاوشوں(سجدہ شکر وتوبہ)کوقبول فرمائے۔آمین۔ہقینا”اللہ ہمیشہ توبہ کرنےاورہمیشہ پاکیزہ رہنےوالوں سےمحبت کرتاہے(فرمان الہی)۔
وماعلیناالی البلاغ۔
نعمان انصاری

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے