Tasawurat Ko Tajseem Soot O Noor

تصورات کو تجسیمِ صوت و نور کیا

ترے خیال نے جب خواب میں ظہور کیا

کل اس کی یاد نے سینے پہ دستکیں دے کر

ملالِ جاں بڑی آہستگی سے دور کیا

٭٭

قرار مل نہ سکا آج اس کی یاد سے بھی

پلٹ رہا ہوں میں اس شہرِ بے مراد سے بھی

بجھے حروف میں لکھی ہیں روشنی کی سطور

کتابِ عمر عبارت ہے اس تضاد سے بھی

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے