سن تو اے دل یہ برہمی کیا ہے؟

سن تو اے دل یہ برہمی کیا ہے؟
آج کچھ درد میں کمی کیا ہے؟
دیکھ لو! رنگِ روئے ناکامی!
یہ نہ پوچھو، کہ بے بسی کیا ہے
اپنی ناکامئ طلب کی قسم!!
عین دریا ہے، تشنگی کیا ہے
جسم محدود، روح لا محدود
پھر یہ اک ربطِ باہمی کیا ہے
اے فلک! اب تجھے تو دکھلا دوں
زورِ بازوئے بے کسی کیا ہے
ہم نہیں جانتے محبت میں!
رنج کیا چیز ہے، خوشی کیا ہے
اک نفس خلد، اک نفس دوزخ
کوئی پوچھے یہ زندگی کیا ہے؟
عدیم ہاشمی 

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے