فروری 5, 2023
ayesha qamar
ایک اردو نظم از عائشہ قمر

الزام لگانے والے سن
ہم وہ تو نہیں جو تم سمجھے
ہم بھی تو دلاسا دیتے تھے
تری چارہ گری سے بکھرے ہیں
ہم روئے نہیں دکھ سہنے سے
ہم ٹوٹے نہیں دکھ سہنے سے
لگتا تھا جنہیں ہم ٹوٹیں گے
اور ہاتھ ہمارے چھوٹیں گے
سو دیکھ لو آکر اب ہم کو
ہم ہارے نہیں ہم بکھرے کیا ؟
جو ظلم کرے وہ نکھرے کیا ؟

 

عائشہ قمر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے