سو مت جانا

سو مت جانا
ایک لمحے کی دوری پیچھے
کتنے اوس میں بھیگے پنچھی آنکھوں نے آزاد کئے
خواب سفر کے سارے جذبے دل میں روشن ہوتی خوشبو
پل پل رنگ میں لپٹی بارش
اندیشوں کی بیل سے الجھے خیال سب ہی برباد کئے
دیکھو رات بہت کالی ہے
آگے سپنے مل جائیں گے
کوئی چمکتا تارہ ہو تو دکھ سکھ کہنا
نیند نہ آئے
آنکھیں موندے نیند آنے کا ناٹک کرنا
تم کو سوتا جان کے تارہ پلکوں پہ آٹھہرے گا
دیکھو ۔۔۔ اس کے ہو مت جانا
صبح سے پہلے
سو مت جانا
سلمیٰ سیّد

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے