Siyahee Girti Rahi

سیاہی گرتی رہے اور دیا خراب نہ ہو
یہ طاقِ چشم اب اِتنا بھی کیا خراب نہ ہو

ہر آنے والا اِسی طرح سے تجھے چاہے
مری بنائی ہوئی یہ فضا خراب نہ ہو

ازل ابد میں ٹھنی ہے سو میں نکلتا ہوں
مری کڑی سے ترا سلسلہ خراب نہ ہو

ہم اِس ہوا سے تو کہتے ہیں کیوں بجھایا چراغ
کہیں چراغ کی اپنی ہوا خراب نہ ہو

میں اپنی شرط پہ آیا تھا اِس خرابے میں
سو میرے ساتھ کوئی دوسرا خراب نہ ہو

مری خرابی کو یکجا کرو کہیں نہ کہیں
مرا معاملہ اب جا بہ جا خراب نہ ہو

میں لَو پکڑتا ہوں ، اور ہاتھ کھینچ لیتا ہوں
مرے گزرنے سے پردہ ترا خراب نہ ہو

خراب ہوں بھلے اِس اشتہا میں ہم اور تم
پر ایک دوسرے کا ذائقہ خراب نہ ہو

بہت حجاب زمیں سے بھی ، آسماں سے بھی
اے ابتدا کے خراب ، انتہا خراب نہ ہو

تم اِس نواحِ خرابہ میں آتے جاتے ہو

یہ میرا خطِ خرابی ، ذرا خراب نہ ہو

شاہین عباس

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے