Shor Aisay Macha Rahay Ho

شور ایسے مچا رہے ہو تم
جیسے دنیا چلا رہے ہو تم

چاک پر شکل کیسے بنتی ہے
کوزہ گر کو بتا رہے ہو تم

آنکھ میں ایک خواب تک نہيں ہے
اور آنکھیں دِکھا رہے ہو تم

کون سے سُر تمہیں سکھائے تھے
اور کس لَے میں گا رہے ہو تم

یہ کہانی مری بُنی ہوئی ہے
اور مجھی کو سنا رہے ہو تم

کون سے شہر میں پڑاﺅ ہے
کس کا بستہ اٹھا رہے ہو تم

آدمی ہو کہ پھول ہو کیا ہو
آگ میں مُسکرا رہے ہو تم

شاعری ہو نہيں رہی ہم سے
اور آنسو بہا رہے ہو تم

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے