شہر در شہر لیے پھرتے ہیں

شہر در شہر لیے پھرتے ہیں
راستے گھر نہیں جانے دیتے
آگے دُنیا نہیں آنے دیتی
پیچھے منظر نہیں جانے دیتے
شام آتی ہے مگر گھر والے
گھر سے باہر نہیں جانے دیتے
دھُوپ رستہ نہیں چلنے دیتی
سائے اُٹھ کر نہیں جانے دیتے
کیوں اُلٹ دیتے ہو پیمانۂ دل
کیوں اِسے بھر نہیں جانے دیتے
کاشف حسین غائر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے