Shaal

ﺷﺎﻝ
ﺍﻧﻮﺭ ﺟﻤﺎﻝ ﺍﻧﻮﺭ

ﺁﺳﻤﺎﻥ ﺳﮯ ﺁﺗﯽ ﭼﺎﻧﺪ ﮐﯽ ﺗﯿﺰ ﺭﻭﺷﻨﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﻗﻄﺎﺭ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﻣﮑﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﻨﺪ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮔﻦ ﺳﮑﺘﯽ ، اس کے لیے یہ چاند اپنی کشش کھو چکا تھا .. یا شاید وہ اپنی کشش چاند کے لیے کھو چکی تھی … اس نے گھروں کے بند دروازے گنے ..ایک ..دو ..تین ..چار ..اور پانچواں اس کا اپنا دروازہ ..
ﺍﺱ ﺑﻨﺪ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﻭﺍﻗﻊ ﺍﮐﻠﻮﺗﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﺎ ﺩﻝ ﺧﻮﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ مگن ﺗﮭﯽ ۔
،، ﺗﻢ ﺟﻠﺪﯼ ﮐﺮ ﻟﻮ ﻧﺎﮞ ،،ﺁﺝ ﺳﺮﺩﯼ ﺑﮩﺖ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ بوڑھی ﻣﺎﮞ ﺑﺎﮨﺮ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﮯ ،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺗﺼﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺳﺮﮔﻮﺷﯽ ﺳﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﺴﮑﺮﺍﺋﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻧﮧ ﺭﮦ ﺳﮑﯽ ۔
ﯾﻘﯿﻨﺎ ﻭﮦ ﯾﮩﯽ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﮨﻮ ﮔﯽ ،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺧﻮﺩ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ،، ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﺮﺍ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﭽﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮩﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﯿﭩﯽ ﮨﮯ ، ﺑﯿﭩﮯ ﺗﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺎﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺑﮍﺍ ﺳﺎ ﮔﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺑﯿﭻ ﮔﺌﮯ۔۔۔
ﺍﻣﺎﮞ ﺗﻮ ﺍﺗﻨﮯ ﺑﮍﮮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﮮ ﮔﯽ ، ﺗﯿﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﮐﻤﺮﺍ ﮨﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﮨﮯ ، ﮔﮭﺮ ﺑﯿﭽﻨﮯ ﺳﮯ ﺍﺑﺎ ﮐﯽ ﺭﻭﺡ ﮐﻮ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯽ ﻓﻀﻮﻝ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ ،، ﻟﮍﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﺟﮭﮍﮎ ﺩﯾﺘﮯ ،، ﺁﺧﺮ ﮐﺎﺭ ﮔﮭﺮ ﺑﮏ ﮔﯿﺎ ۔۔ ﺑﯿﭩﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﮐﻤﺮﺍ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭼﮭﻮﮌ ﮔﺌﮯ ۔۔۔ ۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔ ﺁﺳﻤﺎﻥ پر چاند چمک رہا تھا اس کے برعکس بڑھیا کی آنکھیں بجھی بجھی تھیں جن میں رومانس کی کوئی ایک جھلک بھی نہیں تھی مگر ﺍﻧﺪﺭ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺩﻭ ﺟﻮﺍﻥ ﺟﺴﻢ ایک بے حد رومان پرور ماحول میں بے حد گہری گہری سانسیں لے رہے تھے

،، ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻧﻮﮐﺮﯼ ﺑﮩﺖ ﺑﺮﯼ ﮨﮯ ، ﮐﺌﯽ ﮐﺌﯽ ﮨﻔﺘﮯ ﺗﻢ ﮔﮭﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﮯ ، ﺑﭽﮯ ﮐﺘﻨﺎ ﯾﺎﺩ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻤﮩﯿﮟ ،، ﺟﻮﺍﻥ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺁﭖ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮ چکنے ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺷﮑﻮﻭﮞ ﮐﯽ ﭘﭩﺎﺭﯼ ﮐﮭﻮﻝ ﻟﯽ ۔۔
ﻣﺮﺩ ﺑﻮﻻ ،، ﺍﭼﮭﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺩﻭﺭ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ ، ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﮐﻤﺮﺍ ﮨﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮦ ﺭﮨﯽ ﮨﻮ ، ﻣﯿﺮﮮ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ، ﺩﯾﮑﮫ ﻟﻮ ﺍﺗﻨﯽ ﺳﺮﺩﯼ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﺑﺎﮨﺮ ﮔﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﻨﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﯿﮟ ،،
ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ،، ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﮨﻢ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺍﻧﺪﺭ ﺑﻼ ﻟﯿﮟ ﮔﮯ ،، ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ ،، ﮐﯿﺎ ﮐﺮﯾﮟ ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﮨﮯ ،، ﺟﺐ ﺗﮏ ﻗﺮﺿﮧ ﺍﺩﺍ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮔﺰﺍﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﮮ ﮔﺎ ،،

ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﻗﺮﺿﮯ ﮐﯽ ﯾﺎﺩ ﻣﺖ ﺩﻻﻭ ،، ﻣﺮﺩ ﻧﮯ ﻧﺎﮔﻮﺍﺭﯼ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﻮ ﺑﮭﯿﻨﭻ ﻟﯿﺎ ۔

۔۔۔ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﭘﺮ ﭼﺎﻧﺪ ﺍﻭﺭ زمین پر ﺑﮍﮬﯿﺎ ﺳﺮﺩﯼ ﺳﮯ تھر تھر ﮐﺎنپنے لگے تھے ، ﺁﺝ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﮔﺮﻡ ﺷﺎﻝ ﺍﻭﮌﮬﻨﺎ ﺑﮭﻮﻝ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ ، ﻭﮦ ﺷﺎﻝ ﮐﺌﯽ ﺑﺮﺱ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺷﻮﮨﺮ ﺍﯾﮏ ﻣﮩﻨﮕﯽ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﺳﮯ ﻻﯾﺎ ﺗﮭﺎ

۔۔۔۔۔۔۔ ﯾﮧ ﺷﺎﻝ ﻭﮦ ﻭﺍﺣﺪ ﭼﯿﺰ ﺗﮭﯽ ﺟﺴﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻮﮌﮬﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﻧﮯ,, ﺗﺤﻔﮧ,, ﮐﮩﮧ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ .شاید اس لفظ سے وہ پہلے واقف نہیں تھا اس نے ضرور کسی کو تحفہ دیتے ہوئے دیکھا ہوگا اور تب اس نے سوچا ہوگا کہ وہ بھی اپنی بیوی کو کچھ دے گا .. ﭘﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺭ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﺗﺤﻔﮧ ۔۔ ﻣﮕﺮ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﺗﺤﻔﮯ ﮐﻮ ﭘﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﭨﮭﮑﺎﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ۔ ﯾﻮﮞ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺟﯿﻨﮯ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻘﺼﺪ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ۔۔ ﻭﮦ ﺗﺤﻔﮧ ۔۔ ﺍﯾﮏ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﺗﮭﺎ ۔۔۔ ﺍﯾﮏ ﺩﻟﯽ ﺍﻋﺘﺮﺍﻑ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﮐﮯ ﻋﻮﺽ ۔۔۔ ایک انعام تھا .. لاکھوں کروڑوں کا انعام ..ﻭﮦ ﺗﺤﻔﮧ ﺑﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺷﻮﮨﺮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺧﻮﺵ ﮨﮯ ۔ﺍﻥ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﯾﺎ ﺑﺮﯼ ﺟﯿﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﺗﮭﯽ ﻣﮕﺮ ﺑﮩﺮ ﺣﺎﻝ ﺁ ﺧﺮﯼ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺧﻮﺵ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﯽ ﺑﺎﺕ ﺗﮭﯽ ۔۔

ﭼﺎﻧﺪ ﭼﻤﮏ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﭼﺎﻧﺪﻧﯽ اب ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻌﻨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺗﮭﯽ ۔۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻘﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﺘﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﺯﻧﺪﮦ ﮨﻮﮞ ،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺩﺍﺳﯽ ﺳﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﭘﮭﺮ ﺍﺳﮯ ﺳﮩﺎﮒ ﺭﺍﺕ ﺳﮯ ﺍﺏ ﺗﮏ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ ﮐﮯ ﯾﺎﺩ ﺁﻧﮯ ﻟﮕﮯ ۔۔۔
۔۔۔ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﯾﮟ ﯾﺦ ﺑﺴﺘﮧ ﮨﻮﺍﻭﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺳﯿﻨﮧ ﺗﺎﻧﮯ ﮐﮭﮍﯼ ﺗﮭﯿﮟ ﯾﮩﯽ ﻭﺟﮧ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﻧﺪﺭ ﺩﻭ ﺟﺴﻢ ﺑﮯ ﻟﺒﺎﺱ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺑﮯ ﻓﮑﺮ ﺗﮭﮯ ۔
ﻗﺮﺿﮧ ﺍﺩﺍ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯽ ﮨﻢ ﮐﻢ ﺍﺯ ﮐﻢ ﺗﯿﻦ ﮐﻤﺮﻭﮞ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﭘﺮ ﻟﯿﮟ ﮔﮯ ،، ﻣﺮﺩ ﻧﮯ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﮯ ﺳﻨﮩﺮﮮ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ
ﮐﯿﻮﮞ ؟ ﺗﯿﻦ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﯿﻮﮞ ؟ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺣﯿﺮﺍﻧﯽ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ
ﺍﯾﮏ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﮨﻢ ﺳﻮﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮯ ﺍﻭﺭ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﻣﺎﮞ ۔۔
ﮐﯿﺎ ﺗﻢ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﺳﻮﭺ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ ؟ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ
ﮨﺎﮞ ،، ﻣﺠﮭﮯ ﺗﺮﺱ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻥ ﭘﺮ ،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ،، ﮐﺘﻨﯽ ﻣﺤﻨﺖ ﻭ ﻣﺸﻘﺖ ﺳﮯ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻭﻻﺩ ﮐﻮ ﭘﺎﻝ ﭘﻮﺱ ﮐﺮ ﺑﮍﺍ ﮐﯿﺎ ﻣﮕﺮ ﺁﺝ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﻮﭼﻮ ﺍﮔﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺍﻭﻻﺩ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ ۔۔۔۔
ﺍﭼﺎﻧﮏ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﺎ ﺭﻭﻣﺎﻧﯽ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﺗﻔﮑﺮﺍﺕ ﺳﮯ ﺍﭦ ﮔﯿﺎ ۔۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻧﮯ ﺑﮯ ﭼﯿﻦ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﮯ ﺳﯿﻨﮯ ﺳﮯ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﺐ ﺍﺳﮯ ﮐﮭﻮﻧﭩﯽ پر ﭨﻨﮕﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﺷﺎﻝ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﯽ ۔۔
ﮨﺎﺋﮯ ﺍﻟﻠﮧ ؛ ﻭﮦ ﭼﻮﻧﮑﯽ ،، ﯾﮧ ﮐﯿﺎ ،، ﺍﻣﺎﮞ ﺷﺎﻝ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮨﯽ ﺑﺎﮨﺮ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﮨﮯ ، ﻭﮦ ﺑﮍﺑﮍﺍﺋﯽ ۔۔۔
ﺍﺱ ﮐﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﺍﭨﮫ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ ۔ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﺟﻠﺪﯼ ﺳﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺑﻼﻭ ،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﭙﮍﮮ ﭘﮩﻨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ
ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﺩﻭ ﮔﮭﺒﺮﺍﺋﯽ آنکھوں اور ایک انعام میں ملی شال کے ساتھ ﻋﻮﺭﺕ ﻧﮯ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻻ
ﻣﺎﮞ ﺍﻧﺪﺭ ﺁﺟﺎﻭ ۔۔۔۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﭘﮑﺎﺭ ﮐﺮ ﮐﮩﺎ ..یہ لو اپنی شال ..
ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ کوئی ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮧ ﺩﯾﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺁﮔﮯ ﺑﮍﮬﯽ
ﻣﺎﮞ ﭼﻠﻮ ،،،، ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺎﻧﺪﮬﺎ ﮨﻼﯾﺎ ..مگرﺑﮍﮬﯿﺎ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ ﻟﮍﮬﮏ ﮔﺌﯽ ۔۔۔۔۔
ﻭﮦ ﻣﺮ ﭼﮑﯽ ﺗﮭﯽ ..

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے