Bayes-E-Nang-E-Mohabbat

باعثِ ننگِ محّبت کی پذیرائی ہے

انکو ہر گام پہ اندیشۂ رسوائی ہے

ہم بھی دیکھیں گے کہاں تک غمِ تنہائی ہے

ہم نے بھی ترکِ محّبت کی قسم کھائی ہے

آپ رسوائی کے ڈر سے نہیں ملتے ہیں تو کیا

لیکن اب مِل کے نہ ملنے میں بھی رسوائی ہے

جذبۂ عشق کہاں ہستیِ موہوم کہاں

تیری نظروں کی یہ سب حوصلہ افزائی ہے

جی رہا ہوں نگہِ ناز کی جنبش پہ شکیلؔ

زیست آئینۂ اعجازِ مسیحائی ہے

شکیلؔ بدایونی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے