سنبھالے گا ہمیں کیا غم ہمارا

سنبھالے گا ہمیں کیا غم ہمارا
یہ سایہ بھی ہے کوئی دم ہمارا
تھے ہم اک اَور ہی عالم میں جب تھے
ہے اب کچھ اور ہی عالم ہمارا
ہوئے ہیں قتل ہم اپنے ہی ہاتھوں
کرے گا کیا کوئی ماتم ہمارا
یہ دنیا ہے کہ دشتِ کربلا ہے
یہ دریا ہے کہ سیلِ غم ہمارا
ہمارے بعد گردِ رہگزر کو
رہا تو دھیان کم سے کم ہمارا
یہ بدلے ہی نہیں دن رات اپنے
کہ آیا ہی نہیں موسم ہمارا
کاشف حسین غائر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے