Roz-E-Molod Se

روز ِ مولود سے، ساتھ اپنے ہوا، غم پیدا
لالہ ساں داغ اٹھانے کو ہوئے ہم پیدا

شبہ ہوتا ہے صدف کا مجھے ہر غنچے پر
کہیں موتی نہ کریں قطرہ ِ شبنم پیدا

چپ رہو، دور کرو، منہ نہ میرا کھلواؤ
غافلو زخم ِ زباں کا نہیں مرہم پیدا

دوست ہی دشمن ِ جاں ہو گیا اپنا آتش
نوش وارو نے کیا یا اثر ِ سم پیدا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے