Rehmat Hai Jo Kuch Aur

رحمت ہے جو کچھ اور سِوا ہونے لگی ہے

روزے سے ہوں اور نعت عطا ہونے لگی ہے

توفیق ملی ہے جو کھلی سانس کی مجھ کو

جتنی بھی گھٹن تھی وہ ہوا ہونے لگی ہے

اے عجزِ بیاں دیکھ ،ذرا حرفِ رواں دیکھ

یہ نعت جو آنکھوں سے ادا ہونے لگی ہے

اے شافع محشر ، مری دھرتی پہ نظر کر

مٹی پہ قیامت سی بپا ہونے لگی ہے

سجدوں کو بھلا کیسے بچائیں ، کہ یہاں تو

ہر قسم کی مخلوق خدا ہونے لگی ہے

سعود عثمانی
٭٭٭

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے