رات دن پر شور ساحل جیسا منظر مجھ میں تھا

رات دن پر شور ساحل جیسا منظر مجھ میں تھا
تم سے پہلے موجزن کوئی سمندر مجھ میں تھا
آج تیری یاد سے ٹکرا کے ٹکڑے ہو گیا
وہ جو صدیوں سے لڑھکتا ایک پتھر مجھ میں تھا
جیتے جی صحن مزار دوست تھا میرا وجود
اک شکستہ سا پیالہ اور کبوتر مجھ میں تھا
میں کہاں جاتا دکھانے اپنے اندر کا کمال
جو کبھی مجھ پر نہ کھل پایا وہ جوہر مجھ میں تھا
ڈھونڈھتا پھرتا ہوں اس کو رات دن خود میں حسنؔ
وہ جو کل تک مجھ سے بھی اک شخص بہتر مجھ میں تھا
حسن عباسی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے