قبر پر وہ بتِ گل فام آیا

قبر پر وہ بتِ گل فام آیا
بارے مرنا تو مرے کام آیا
دو قدم یاں سے وہ کوچہ ہے مگر
نامہ بر صبح گیا، شام آیا
مر گئے پر نہ گیا رنج کہ وہ
گور پر آئے تو آرام آیا
خیر باد اے ہوسِ کام کہ اب
دل میں شوقِ بتِ خود کام آیا
شمع کی طرح اٹھے ہم بھی جب
دشمنِ تیرہ سر انجام آیا
جب مری آہ فلک پر پہنچی
تب وہ مغرور سرِ بام آیا
جلد منگواؤ شرابِ گل رنگ
شیفتہ ساقیِ گل فام آیا
س سے میں شکوے کی جا شکرِ ستم کر آیا
کیا کروں تھا مرے دل میں سو زباں پر آیا
مصطفیٰ خان شیفتہ

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے