Phir Soch Ki Khidki Per Koi Bael Chadhi Hay – Iftikhar Shahid

Phir Soch Ki Khidki Per Koi Bael Chadhi Hay – Iftikhar Shahid
From Daska – Sialkot

پھر یاد کی کھڑکی پہ کوئی بیل چڑھی ہے
پھر سوچ کے شانوں پہ تری زلف ڈھلی ہے

میں آر کنارے پہ اسے ڈھونڈ رہاہوں
وہ پار کنارے پہ مجھے ڈھونڈ رہی ہے

اک بات جو اُن کانپتے ہونٹوں میں دبی تھی
وہ بات مرے پاوں کی زنجیر بنی ہے

اس شہرِ خرابات سے جس روز تو گزرا
سنتے ہیں کہ اس روز سے یاروں میں ٹھنی ہے

دیکھو گے تو ہر چیز کا ہے روپ نرالا
سوچو گے تو ہر چیز ہی مٹی سے بنی ہے

پَر کاٹ کے پنجرے سے مجھے تُو نے نکالا
اس درجہ رہائی سے تری قید بھلی ہے

افتخار شاھد ابو سعد

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This website uses cookies to improve your experience. We'll assume you're ok with this, but you can opt-out if you wish. Accept Read More