پی کے تلخابۂ غم جاتے ہیں

پی کے تلخابۂ غم جاتے ہیں
لے تری بزم سے ہم جاتے ہیں
جب سے اٹھ آئے تری محفل سے
ہم کہیں اور بھی کم جاتے ہیں
جانے اس راہ میں کیا کھو آئے
روز کچھ ڈھونڈنے ہم جاتے ہیں
ان کے غصے کے نہ تیور بدلے
ورنہ طوفان بھی تھم جاتے ہیں
جب سے ٹوٹا ہے سفینہ باقیؔ
ساتھ ہر موج کے ہم جاتے ہیں
باقی صدیقی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے