پائے غیر اور میرا سر دیکھو

پائے غیر اور میرا سر دیکھو
ٹوٹ جائے نہ سنگ در دیکھو
ایک عالم پڑا ہے چکر میں
گردش چشم فتنہ گر دیکھو
میں نظر بند غیر مد نظر
اپنا دل اور مرا جگر دیکھو
چشم پر نم ہے تن غبار آلود
آن کر سیر بحر و بر دیکھو
فکر افشائے راز کیوں نہ کروں
کیا حیا خیز ہے نظر دیکھو
ہے دگر گوں مریض غم کا حال
ہو سکے تو دوا بھی کر دیکھو
غیر جھلتے ہیں اب انہیں پنکھا
اثر آہ پر شرر دیکھو
کم نمائی و خویشتن بینی
کتنے بے دید ہو ادھر دیکھو
اسماعیلؔ میرٹھی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے