Nhroon Mein Wohi Aab

نہروں میں وہی آبِ خنک جاری کروں گا

دریا کی طرح دشت کی دل داری کروں گا

جو چاہے کسی قریۂ گل پوش میں بس جائے

میں تو اسی صحرا کی نگہداری کروں گا

مٹی سے حلف خون میں رہتا ہے مری جان

پلٹوں گا تو اس عہد سے غداری کروں گا

جو مجھ میں ہے اس خواب میں رہنا نہیں آتا

کیا جانے کب آسان یہ دشواری کروں گا

دل آتشِ خفتہ کا دفینہ ہے سو اک دن

چقماق سے روشن وہی چنگاری کروں گا

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے