محبت

محبت ایک آوارہ تمنا ہے
جو روحوں میں بھٹکتی ہے
قدیم اور اصل
موت اور زندگی سے ماوراء
اور اس میں پنہاں بھی
نہ جانے کتنے جنموں سے
کسی دل کی بیابانی میں افتادہ
کبھی اشکوں میں ڈھلتی شام کی لو میں تھرکتی ہے
کسی انجام سے پہلے اجڑ کر
اک نیا آغاز بنتی ہے
زوال اور رفعتوں کی داستانیں
اور تغیر کی فراوانی
فقط اک صورت آلام
ہر لمحہ بدلتی ہے
کوئی عالم ہو
ہر ” شے ” اور ” لاشے” میں
کہیں افسردگی اور سوگواری سی مچلتی ہے
محبت ساتھ چلتی ہے
عدیم ہاشمی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے