فروری 5, 2023
ayesha qamar
عائشہ قمر کی ایک اردو غزل

محبت میں جو وعدوں کو نبھانا چھور دیتے ہیں
وہ خودغرضی میں گرتے کو اٹھانا چھوڑ دیتے ہیں

خدا آگاہ رکھے جن کو عالم کی حقیقت سے
تو وہ لوگوں کو دانستہ گرانا چھوڑ دیتے ہیں

خدا کے جن بھی بندوں پر خدا کے راز افشا ہوں
تو وہ فانی جہاں میں دل لگانا چھوڑ دیتے ہیں

میسر اپنا ہو جن کو کبھی جو بات کرنے کو
وہ بزمِ دوستاں میں غم سنانا چھوڑ دیتے ہیں

مصیبت کو بھی جو عاشی سمجھتے ہیں رضا رب کی
یونہی وہ آسماں سر پر اٹھانا چھوڑ دیتے ہیں

 

عائشہ قمر

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے