Mere Khilaf Adalat Bhi Thi

مرے خلاف عدالت بھی تھی زمانہ بھی
مجھےتو جرم بتانا بھی تھا چھپانا بھی

اور اب کی بار تو ایسے کمان کھینچی ہے
کہ تِیر لے اُڑا شانہ بھی اور نشانہ بھی

جو سانپ غیر ضروری تھے مار ڈالے ہیں
اب آستیں بھی سلامت ہے آستانہ بھی

یہ مَے کشوں کا توازن بھی کیا توازن ہے
کھڑے بھی رہنا سہولت سے لڑکھڑانا بھی

مرا نہيں ‘ مرے ایمان کا تقاضا تھا
کہ مجھ سے عشق کرے کوئی کافرانہ بھی

تم اِس لئے بھی مجھے اجنبی نہيں لگتے
کہ تم سے ایک تعلق تھا غائبانہ بھی

ہمارے شہر کے لوگوں کو خوب آتا ہے
کسی کو سَر پہ بٹھانا بھی اور گِرانا بھی

یونہی تو میر کے دَر سے نہيں اُٹھائے گئے
ہمارے پاس غزل بھی تھی اور فسانہ بھی

عمران عامی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے