Mein Chohtay Logoon Ko

مَیں چھوٹے لوگوں کو پہلے بَڑا بناتا تھا
پھر اس کے بعد انھیں آئنہ دِکھاتا تھا

اِسی لئے تو درختوں کے حافظے میں ہوں
مَیں روشنی کےلئے لکڑیاں جلاتا تھا

تجھے کہا تھا کہ سائے کا اعتبار نہيں
کہاں گیا جو ترے ساتھ آتا جاتا تھا

یہ شاعری تو بہت بعد کا معاملہ ہے
مَیں اِس سے پہلے یہاں بکریاں چَراتا تھا

گَڑا ہوا تھا کہیں سنگِ میل کی صورت
ہر ایک شخص مجھے دیکھنے کو آتا تھا

وہ ایک زخم کی بھی تاب لا نہيں پایا
جو دوسروں کےلئے بَرچھیاں بناتا تھا

زمین پاؤں پکڑتی تھی آتے جاتے ہوئے
اور آسماں مجھے اپنی طرف اُڑاتا تھا

پھر ایک دن مجھے دریا نے آ لیا , عامی
مَیں کاغذوں سے بہت کشتیاں بناتا تھا

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے