Mehak Uthy Ghi Sari

مہک اٹھے گی ساری راہگزر آہستہ آہستہ

ہوا کرتا ہے خوشبو کا سفر آہستہ آہستہ

دئیے صرف ایک غم نے زندگی کو زاویئے کیا کیا

جلیں اک لو سے شمعیں کس قدر،آہستہ آہستہ

مرے حسنِنظر کا خود مجھے احساس تک کیوں ہو

جمالِ یار کر آنکھوں میں گھر،آہستہ آہستہ

شعاعیں خود ہی اپنا راستہ پہچان لیتی ہیں

اتر آتی ہے آنکھوں میں سحر آہستہ آہستہ

تری یادیں بھی اک اک کر کے رخصت ہوتی جاتی ہیں

بچھڑتے جا رہے ہیں ہم سفر آہستہ آہستہ

سعود عثمانی

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے