مذکورہ تری بزم ميں کس کا نہيں آتا

مذکورہ تری بزم ميں کس کا نہيں آتا
پر ذکر ہمارا نہيں آتا نہيں آتا
جينا ھميں اصلا نظر اپنا نہيں آتا
گر آج بھی وہ رشک مسيحا نہيں آتا
کيا جانے اسے وہم ھے کيا ميرے طرف سے
جو خواب ميں بھی رات کو نہيں آتا
بے جا ھے ولا اس کے نہانےکی شکايت
کيا کيجئے گا فرمائيے اچھا نہيں آتا
کس دن نہيں ھوتا قلق ھجر ہے مجھ کو
کس وقت مرا منہ کو کليجہ نہيں آتا
ھم رونے پہ آجائيں تو دريا ھي بہائيں
شبنم کی طرح سے ھميں رونا نہيں آتا
آنا ھے تو آجا کہ کوئی دم کی ھے فرصت
پھر دیکھیئےآتا ھے دم يا نہيں آتا
ہستی سے زيادہ کچھ آرام عدم ميں
جو جاتا ھے يہاں سے وہ دوبارہ نہيں آتا
دنيا ھے وہ صياد کہ سب دام ميں اس کے
آ جاتے ھيں ليکن کوئی دانا نہيں آتا
جو کوچہ قاتل ميں گيا پھر وہ نہ آيا
کيا جانے مزہ کيا ھے کہ جيتا نہيں آتا
قسمت ہی سے لاچار ھوں اے ذوق و گرنہ
سب فن ميں ھوں ميں طاق مجھےکيا نہيں آتا​
ابراہیم ذوق

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے