Manqabat Hazrat Fatima (RA)

منقبت بحضور سیدہ فاطمتہ الزہرا سلام اللہ علیہا ۔۔

پڑا ہوں در پہ تیرے مثلِ کاہ یا زہرا​
ملے فقیر کو خیراتِ جاہ یا زہرا​

ہے مرتضی تیرے شوہر، تو مصطفی بابا​
زہے یہ اوج و شرف ،عز و جاہ یا زہرا​

ملے جو اسکی اجازت مجھے شریعت سے​
تو تیرا در ہو میری سجدہ گاہ یا زہرا​

خدا کو میں نے سدا لا شریک مانا ہے​
خدا کے سامنے رہنا گواہ یا زہرا​

ہیں جن کے نور سے امت کے روزو شب روشن​
حسن حسین تیرے مہر و ماہ یا زہرا​

تیرے حسین کا کردار دیکھ کر اب تک​
پکارتے ہیں ملک واہ واہ یا زہرا​

درود تجھ پہ ہو مصداقِ بضعۃ منی​
سلام تجھ پہ ہو گیتی پناہ یا زہرا​

ہیں تیری آل سے پیرانِ پیر محی الدین​
جو اولیاء کے ہوئے سربراہ یا زہرا​

بھروں تو کیسے بھروں دم تیری غلامی کا​
بہت بڑی ہے تیری بارگاہ یا زہرا​

کہاں تو ایک نجیبہ عفیفہ پاک نظر​
کہاں میں ایک اسیرِ گناہ یا زہرا​

تو بادشاہِ دو عالم کی ایک شہزادی​
میں اک غریب تیری گرد راہ یا زہرا​

اجڑ چکا ہوں غم زندگی کے ہاتھوں سے​
کھڑا ہوں در پہ بحالِ تباہ یا زہرا​

ہوں معصیت کی سیاہی ملے ہوے منہ پر​
کسےدکھاؤں یہ روئے سیاہ یا زہرا​

میں گو بُرا ہوں مگر تیرا وہ گھرانہ ہے​
کیا بُروں سے بھی جس نے نباہ یا زہرا​

بھری ہیں در سے ہزاروں نے جھولیاں اپنی​
میری طرف بھی کرم کی نگاہ یا زہرا​

نہ پھیر آج مجھے اپنے در سے تو خالی​
کہ تیرے بابا ہیں شاہوں کے شاہ یا زہرا​

جیوں تو لے کے جیوں تیری دولتِ نسبت​
مروں تو لے کے مروں تیری چاہ یا زہرا​

بروز حشر نہ پرسان ہو جب کوئی اسکا​
ملے نصیر کو تیری پناہ یا زہرا

(جناب پیر نصیر الدین نصیر رح )

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے