معلوم جو ھوتا ھميں انجام محبت

معلوم جو ھوتا ھميں انجام محبت
ليتے نہ کبھي بھول کے ھم نام محبت
ھيں داغ محبت درم و دام محبت
مثردہ روز اڑا ديتا ھے وھ کرکے تصديق
ھر روز اڑا ديتا ھے وہ کرکے تصديق
دو چار اسير قفس دام محبت
مانند کباب آگے پہ گرتے ھيں ھميشہ
دل سوز ترے بستر آرام محبت
کاسہ ميں فلک کے نہ رھے نام کو زہر آب
دہر کہينچے اگر تشنہ لب جام محبت
کي جس سے رہ و سم محبت اسے مارا
پيغام قضا ھے ترا پيغام محبت
نے زھد سے ھے کام نہ زاھد سے کہ ھم تو
ھيں بادھ کش عشق و مئے جام محبت
ايمان کو گرو رکہ کے نہ يوں کفر کو لے مول
کافر نہو گرويدھ اسلام محبت
کہتي تہي وفا کناں نعش پہ مري
سونپا کسے تو نے مجھے ناکام محبت
معراج سمجھ ذوق تو قاتل کي سناں کو
چڑھ سر کے بل سے زينے پہ تا بام محبت​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے