Main Kya Hoon

میں کیا ہوں اس خیال سے لگتا ہے ڈر مجھے
کیوں دیکھتے ہیں غور سے اہلِ نظر مجھے

لے جاو ساتھ ہوش کو اے اہلِ ہوش جاو
ہے خوب اپنی بے خبری کی خبر مجھے

بدلی ہوئی نگاہ کو پہچانتا ہوں میں
دینے لگے پھر آپ فریبِ نظر مجھے

گم ہو گیا ہوں بے خودئ زوقِ عشق میں
اے عقل جا کے لا تو ذرا ڈھونڈ کر مجھے

میں اپنی زندگی کو بُرا کیوں کہوں حفیظ
رہنا ہے اس کے ساتھ میاں عُمر بھر مجھے

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے