Maay Pian Kya Ky Kuch

مے پئیں کیا کہ کچھ فضا ہی نہیں
ساقیا باغ میں گھٹا ہی نہیں

خضر کیا جانیں مرگ کی لذت
اس مزے سے وہ آشنا ہی نہیں

شعر وصفِ دہن میں سُن کے کہا
ایسا مضمون کبھی سُنا ہی نہیں

کس طرح جائیں اُن کی محفل میں
جن کے دل میں ہماری جا ہی نہیں

کیا سُنیں گے وہ خلق کی فریاد
کہتے ہیں جو کوئی خدا ہی نہیں

لذتِ عیش وصل کیا جانیں
اس میں حصہ ہمیں ملا ہی نہیں

کل تلک تھا وہ ربط وہ اخلاص
آج وہ شوخ آشنا ہی نہیں

ہے ہمیں اب تو تیری اُلفت میں
صدمہ وہ جس کی انتہا ہی نہیں

مرنے والوں سے کہتے ہیں وہ امیر
کیا تمہاری کبھی قضا ہی نہیں​

اس پوسٹ کو شیئر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے